Articles

This gallery contains 2 photos.

Advertisements

Rate this:

Gallery | Leave a comment

ایم کیو ایم کا مقدمہ

ارشد سلہری
پاکستان مختلف قومیتی اکائیوں پر مشتمل ایک ایسی ریاست ہے ۔ جس میں قومی مسلہ ایک بھڑکتا ہوا شعلہ ہے ۔ ریاستی قوتیں اس مسلے کو حل کرنے کی بجائے طاقت کا بے دریغ استعمال کر رہی ہیں ۔ جس کے نتائج ملکی صوتحال سے عیاں ہیں ۔ کسی بھی طبقہ یا قوم کو تشدد کے ذریعے حب الوطنی کے دائرے میں نہیں لایا جاسکتا ہے ۔ الطاف حسین کے پاکستان مخالف نعروں سے پیدا صورتحال انتہائی تکلیف دہ ہے ۔ میڈیا سمیت عوامی سطح پر ایم کیوایم اور مہاجر قوم کے خلاف نفرت کی یلغار جاری ہے۔ریاستی ادارے متحدہ کے دفاتر مسمار کر ر ہے ہیں ۔ گرفتاریاں ہو رہی ہیں۔ ایک جنگ کی سی حالت پیدا کر دی گئی ہے۔ جو کسی بھی طور پر درست تاثر نہیں ہے۔ ایم کیو ایم ایک سیاسی پارلیمانی جماعت ہے ۔ جیسے دیوار کے ساتھ لگانے کی کوشش سے اچھے نتائج برآمد نہیں ہوں گے ۔ سیاسی قوقوں اور ریاستی اداروں کو اس بات کو سمجھنے کی ضرورت ہے۔ملک کے دانشور طبقہ اور اہل قلم کو ایک راگ الاپنے کی بجائے اس بات کی جانب بھی دھیان کر نے کی ضرورت ہے کہ الطاف حسین پاکستان مخالف کیوں بولتے ہیں ۔ کیا یہ سچ نہیں ہے کہ جب الطاف حسین آل پاکستان مہاجر سٹوڈنٹس آرگنائزیشن لیکر نکلے تو انہیں ڈاریا ، دھمکایا گیا ۔ ان پر کئی قاتلانہ حملے کیے گئے۔ بحیثیت مجموعی مہاجر وں کے ساتھ دیگر قوموں کا رویہ کیسا تھا ۔ بلخصوص پنجابی ، سندھی اور پختون مہاجروں کو کیسے دیکھتے تھے۔یہ ایک لمبی کہانی ہے۔ باخبر حلقے بخوبی واقف ہیں۔ ایم کیو ایم نے ریاست کے خلاف بغاوت نہیں کی ہے۔ سخت ترین حالات کے باوجود کبھی ایم کیوں ایم نے ریاست کے خلاف ہتھیار نہیں اٹھائے ہیں ۔ ہاں ریاست نے کئی بار ایم کیوں ایم کو کچلنے کی کوشش کی ہے ۔ دہشت گردی اور جرائم پیشہ افراد کے خلاف آپریشن کے نام پر ایم کیوں ایم کی سرجری جاری ہے۔ان حالات میں اگر الطاف حسین نے پاکستان مخالف نعرے بازی کی ہے تو الطاف حسین کو پکڑا جائے ۔ ان خواتین اور کارکنان کا کیا قصور ہے جنہوں الطاف حسین کے نعرے کا جواب بھی نہیں دیا تھا۔ کہی ایسا تو انہیں ہے کہ کچھ نادیدہ قوتیں کراچی کو بھی بلوچستان بنانا چاہتی ہیں ۔ ابھی وقت ہے ۔ درست راستہ اختیار کیا جائے ۔ جس کی لاٹھی اس کی بھینس والا فارمولہ ترک کرتے ہوئے بات چیت کی راہ اپنائی جائے ۔ مہاجر ہمارے اپنے ہیں ۔ کوئی گھس بیٹھیے نہیں ہیں ۔ یہ وہی لوگ ہیں ۔ جنہوں نے پاکستان کے لئے جانیں قربان کیں ، اپنے گھر بار چھوڑ کر پاکستان کیلئے مہاجرت اختیار کی ہے۔ یہ وہی الطاف حسین ہے جو 1971 میں پاکستان آرمی کا حصہ تھا۔ نفرت تو نفرت کے ہی بیج بوئے گی ۔ کیا ہم نے اپنے ماضی سے کوئی سبق حاصل نہیں کیا ہے ۔ مشرقی پاکستان کے اچھے بھلے پاکستانی باشندوں کو ہم نے بنگالی بنادیا ۔ جنہیں ہم تھوڑی سی عزت دینے کو تیار نہیں تھے۔ جب انہوں اپنے حقوق کی بات کی تو انہیں غدار کہنے لگے۔ ہاں ، مجبور ہو کر وہ ہم سے علیحدہ ہوئے اور انہوں نے اپنا الگ گھر بنا لیا ۔ دیکھ لیں جاکر وہ ہم سے الگ ہو کر خوش اور خوشحال ہیں ۔ ہم اندر سے بہت تقیسم ہوچکے ہیں ۔ ہمیں اپنی کمزوریوں کو دور کرنے کے کوشش کرنی چاہیے نہ کہ مزید بگاڑ پیدا کیا جائے۔

Posted in Uncategorized | Leave a comment

Interview

8

Image | Posted on by | Leave a comment

4

Image | Posted on by | Leave a comment
Posted in Uncategorized | Leave a comment

imran

3529624Page4

Image | Posted on by | Leave a comment

Imran vs Nawaz

This gallery contains 4 photos.

Rate this:

Gallery | Leave a comment